حکومت پاکستان کا ملک بھر میں موسمیاتی تبدیلی صحافتی ایوارڈز شروع کرنے کا اعلان

اسلام آباد(ثاقب علی راٹھور):وزیراعظم کی کوآرڈینیٹر برائے موسمیاتی تبدیلی و ماحولیاتی رابطہ رومینہ خورشید عالم نے وزیراعظم کی سرپرستی میں ماحولیاتی رپورٹرز کے لیے ملک گیر کلائمیٹ جرنلزم ایوارڈز شروع کرنے کا اعلان کرتے ہوئے ماحولیاتی آلودگی کے خلاف ملک کی لچک کو بڑھانے کے لیے سٹیک ہولڈرز کے درمیان تعاون کے ذریعے گلوبل وارمنگ کے اثرات اور کم ہوتے قدرتی ذخائر کے پیش نظر ماحولیاتی نظام کو محفوظ رکھنے کے لیے کثیر الشعبہ جاتی وژن پیش کیا ہے۔ منگل کو کلائمیٹ بیٹ کے رپورٹر کے ساتھ بات چیت میں انہوں نے اعلان کیا کہ ماحولیات اور موسمیاتی تبدیلیوں کی کوریج کرنے والے صحافیوں کو وزارت کی کلائمیٹ فورس کہا جائے گا کیونکہ وہ ہر پالیسی کے پیچھے وہ قوت ہوتے ہیں جو اس کے موثر ابلاغ کے ذریعے معاشرے کو فائدہ پہنچاتی ہے، وہ کلائمیٹ ایکشن کے چیمپئن ہیں۔

رومینہ خورشید عالم نے کہا کہ ماحول ہر ایک کے دل کے بہت قریب ہے اور غیر ذمہ دارانہ انسانی سرگرمیوں کے ذریعے پیدا ہونے والے ماحولیاتی انحطاط کے اثرات کے بارے میں باخبر رپورٹنگ کے ذریعے عوام کو آگاہ کرنے میں میڈیا کا کردار بہت اہم ہے۔ انہوں نے کہا کہ وزارت وزیراعظم کے توسط سے موسمیاتی رپورٹرز کو الگ الگ کیٹیگریز میں پرنٹ، الیکٹرانک اور سوشل میڈیا ایوارڈز سے نوازے گی جبکہ ہر چھ ماہ بعد یا سالانہ بنیادوں پر ان ایوارڈز کا انعقاد کرنے کا ارادہ ہے۔ اس موقع پر انہوں نے سابق وفاقی وزیر برائے موسمیاتی تبدیلی مرحوم سینیٹر مشاہد اللہ خان کو خراج عقیدت پیش کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ورلڈ اکنامک فورم میں وزیراعظم کے خطاب میں بھی امن اور موسمیاتی تبدیلی پر توجہ مرکوز کی گئی۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزارت پلاسٹک پر پابندی کے نفاذ کے ذریعے اپنی مہم شروع کرے گی۔ وزیراعظم کے کوآرڈینیٹر نے بتایا کہ انہوں نے وزیر کے دفتر میں واک ان پالیسی کو اپنایا ہے تاکہ کاروباری افراد سے لے کر عام آدمی تک سب کے لیے سفارشات، تجاویز اور مشترکہ منصوبوں کے لیے ماحول کے تحفظ کی مداخلتوں کو بڑھایا جا سکے۔ اس پالیسی پر زبردست ردعمل ملا ہے۔ وزارت نے سوشل میڈیا پر اپنی موجودگی کو بڑھایا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزارت پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کو اس کی کارپوریٹ سماجی ذمہ داری کے تحت ائیر ٹائم کو یقینی بنانے کے لیے بھی جا رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم تمام صوبوں کو ساتھ لے کر چلیں گے، ہمیں جامع مذاکرات کو فروغ دینا ہوگا کیونکہ پاکستان کو موسمیاتی تبدیلیوں کی وجہ سے جنگی صورتحال کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ قومی موافقت کے منصوبے میں پائیدار حل کے ذریعے ملک میں کمزور کمیونٹیز کے تحفظ کے لیے ہمارے تمام وعدے اور ترجیحات ہیں جبکہ وزارت انڈس بیسن اور ماحولیاتی نظام کی بحالی پر وسیع پیمانے پر کام کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ عوامی آگاہی ضروری ہے اور عوام کو موسمیاتی قوانین کی خلاف ورزی کرنے والوں کے بارے میں بتایا جانا چاہیے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ موسمیاتی سیاحت کو فروغ دیا جائے گا جبکہ حال ہی میں مارگلہ ہلز نیشنل پارک میں ورلڈ ارتھ ڈے میراتھن نے عوام کو واضح پیغام دیا کہ وہ پلاسٹک اور کوڑا نہ پھینکنے والے نعروں پر عمل کریں۔ اس موقع پر، ممبر کلائمیٹ چینج پلاننگ کمیشن، نادیہ رحمان نے کہا کہ وزارت کی نئی موسمیاتی حکمت عملی جامع ہے اور اس میں میڈیا اور ایڈووکیسی شامل ہے جو کہ اہم ہے، موسمیاتی تبدیلی کو حکومتی سطح پر بہت توجہ دی جا رہی ہے۔ ڈائریکٹر جنرل انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی، فرزانہ الطاف شاہ نے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے صحافیوں پر زور دیا کہ وہ پلاسٹک آلودگی کے خاتمے کے لیے پلاسٹک فری نعرے کو اجاگر کریں اور اسے فروغ دیں۔

متعلقہ آرٹیکلز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button