غزہ میں میڈیکل کے متاثرہ طالب علم اب پاکستان میں تعلیم جاری رکھیں گئے۔ پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل

اسلام آباد(ثاقب علی راٹھور)اکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل (PM&DC) نے غزہ کے میڈیکل/ڈینٹل طلباء کو پاکستان میں اپنی تعلیم مکمل کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ کونسل کا یہ فیصلہ غزہ کے طلباء کو پاکستان میں انسانی بنیادوں پر طبی تعلیم جاری رکھنے کے قابل بناتا ہے، اس بات کو یقینی بناتے ہوئے کہ ان کے ملک میں مشکل حالات کی وجہ سے ان کی پڑھائی میں خلل نہ پڑے۔پی ایم اینڈ ڈی سی کونسل نے اپنے حالیہ اجلاس میں یہ فیصلہ لندن میں پاکستانی ہائی کمشنر کی درخواست پر کیا کہ وہ موجودہ حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے غزہ کے طلباء کو پاکستان میں ایڈجسٹ کریں تاکہ غزہ کے طلباء کو ایک مستحکم اور وسائل سے بھرپور ماحول بنانے کا موقع فراہم کیا جا سکے۔ اپنی میڈیکل ڈگریاں حاصل کریں اور غزہ میں صحت کی دیکھ بھال کے شعبے میں اپنا حصہ ڈالیں۔اگرچہ کونسل کے پاس PM&DC قانون / ضوابط کے تحت پاکستان میں غیر ملکی طلباء کے کلینیکل روٹیشن کا کوئی خاص بندوبست نہیں تھا۔ تاہم ہائی کمیشن کی درخواست پر معاملہ کونسل کے سامنے رکھا گیا۔ ہائی کمیشن نے تجویز پیش کی کہ طلباء 20-30 کے بیچوں میں آئیں گے، جن کی متوقع تعداد 100 طلباء کی ہوگی اور پاکستان میں ان کی کلینیکل پلیسمنٹ مکمل ہونے پر، یہ طلباء غزہ کی یونیورسٹیوں سے پاکستانی میڈیکل کالجوں میں کلینیکل گردش کے لیے فارغ التحصیل ہوں گے۔ سرکاری شعبے میں منسلک تدریسی ہسپتال، بطور خاص۔صدر PM&DC اور کونسل ممبران کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی جائے گی جس میں MOFA اور NHSR&C کے نمائندے شامل ہوں گے تاکہ ان طلباء کو اسی سالوں میں پاکستانی میڈیکل ایجوکیشن سسٹم میں آسانی سے شامل کیا جا سکے۔صدر پی ایم اینڈ ڈی سی سے بات کرتے ہوئے انہوں نے وضاحت کی کہ یہ وقت کی ضرورت ہے اور کونسل ضرورت کی اس گھڑی میں مدد کرنا چاہتی ہے۔ غزہ کے طلباء کو ایک اچھی طرح سے لیس ماحول میں سیکھنے کا موقع ملے گا، جس کی غزہ میں جاری تنازعات اور وسائل کی رکاوٹوں کی وجہ سے کمی ہو سکتی ہے۔پاکستان میں طبی تعلیم حاصل کرنے سے غزہ کے طبی طلباء کو بہت سے فوائد مل سکتے ہیں جو وہ اپنے ملک واپس لے سکتے ہیں، جس سے ان کی کمیونٹیز اور غزہ میں صحت کی دیکھ بھال کے مجموعی نظام پر اثر پڑے گا۔ پاکستان میں طبی تعلیم بین الاقوامی تعاون کے مواقع کھول سکتی ہے۔ گریجویٹ غزہ میں صحت کی دیکھ بھال کے منصوبوں کے لیے وسائل، مہارت اور تعاون کو راغب کرنے، عالمی صحت کی تنظیموں کے ساتھ روابط قائم کر سکتے ہیں۔پاکستان میں اپنی تعلیم کے دوران مختلف طبی خصوصیات سے واقفیت طلباء کو دلچسپی کے مخصوص شعبوں کو حاصل کرنے کی اجازت دیتی ہے۔ وہ غزہ کے صحت کی دیکھ بھال کے نظام میں اہم ضروریات کو پورا کرتے ہوئے کارڈیالوجی، آرتھوپیڈکس، آنکولوجی، پیڈیاٹرکس، یا سرجری جیسے شعبوں میں خصوصی مہارت حاصل کریں گے۔گریجویٹس اپنے علم اور مہارتوں کو بانٹ کر غزہ میں صحت کی دیکھ بھال کرنے والے دیگر پیشہ ور افراد کے لیے ٹرینر اور سرپرست کے طور پر کام کر سکتے ہیں، وہ اپنی کمیونٹی میں طبی مشق کے مجموعی معیار کو بلند کرنے میں مدد کر سکتے ہیں۔ تحقیق اور جدید طبی طریقوں کی نمائش کے ساتھ، یہ طلباء صحت کی دیکھ بھال کی ضروریات میں حصہ ڈال سکتے ہیں۔ یہ اقدام ایسے ہی چیلنجوں کا سامنا کرنے والے ممالک کے درمیان یکجہتی اور حمایت کے احساس کو پروان چڑھائے گا۔ یہ دیگر اقوام کی ترقی اور لچک میں مدد کے لیے پاکستان کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔ اعلی درجے کی طبی تربیت سے آراستہ، یہ طلباء کمیونٹی کی صحت کی تعلیم میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں، احتیاطی نگہداشت، حفظان صحت، غذائیت اور بیماریوں سے بچاؤ کے بارے میں بیداری پیدا کر سکتے ہیں اور صحت کی دیکھ بھال کے بحرانوں، جیسے کہ تنازعات یا قدرتی آفات کا بہتر طور پر جواب دے سکتے ہیں۔ ان کی مہارتیں ہنگامی دیکھ بھال فراہم کرنے اور صحت عامہ کے چیلنجوں سے نمٹنے میں اہم ثابت ہو سکتی ہیں۔مجموعی طور پرپاکستان میں حاصل کی جانے والی طبی تعلیم غزہ کے طالب علموں کو اپنے ملک کے صحت کی دیکھ بھال کے نظام میں PM&DC کے اعلیٰ تعلیمی معیار کے مطابق اہم کردار ادا کرنے کے لیے بااختیار بنا سکتی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ غزہ کے طلباء کو تعلیمی مواقع فراہم کرکے، PM&DC اور پاکستان تنازعات اور عدم استحکام سے متاثرہ علاقوں کے لیے انسانی امداد اور حمایت کے لیے اپنے عزم کا اظہار کرتے ہیں۔ جاری تنازعات کی وجہ سے بہت سے طلباء کو ان کی تعلیم میں رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ انہیں پاکستان میں تعلیم حاصل کرنے کا موقع فراہم کرکے، PMDC ان کی تعلیم حاصل کرنے میں مدد کرے گا۔ اس فیصلے کے اثرات سے غزہ کے طلباء کو پاکستان میں تعلیم حاصل کرنے کا موقع ملے گا تاکہ دونوں خطوں کے درمیان تعلیمی تبادلے اور تعاون کو فروغ ملے اور پاکستان اور فلسطین کے درمیان سفارتی اور ثقافتی تعلقات کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی۔ غزہ کے طلباء کو یہ مواقع فراہم کرنے سے ان کی ذاتی اور پیشہ ورانہ ترقی کے دروازے بھی کھلیں گے۔ یہ انہیں اپنے ملک کے لیے بامعنی شراکت کرنے کے لیے بااختیار بنائے گا۔

متعلقہ آرٹیکلز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button