امریکا اور چین میں سے اتحادی کسی کا بھی انتخاب کرسکتے ہیں، اینٹونی بلنکن

امریکا اور چین میں سے اتحادی کسی کا بھی انتخاب کرسکتے ہیں، اینٹونی بلنکن
Spread the love

برسلز: امریکا کے وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن نے کہا ہے کہ چین مغریب کے لیے خطرہ ہے تاہم ہم کسی پر امریکا اور چین میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنے کے لیے دباؤ نہیں ڈالیں گے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق برسلز میں منصب سنبھالنے کے بعد اپنے پہلے دورۂ یورپ میں اپنے یورپی ہم منصبوں سے ملاقات میں امریکی وزیر خاجہ نے چین، روس، ایران کے ساتھ جوہری معاہدے اور یکم مئی کو ختم ہونے والی افغانستان سے فوج کے انخلا کی مہلت سمیت اہم امور پر تبادلہ خیال کیا۔

نیٹو ہیڈ کوارٹر میں خطاب کرتے ہوئے امریکی وزیر خاجہ کا کہنا تھا کہ امریکا چین کے معاملے پر ’’ہم یا وہ‘‘ کا رویہ اختیار نہیں کرے گا اور اتحادیوں پر کسی ایک کی طرف داری کے لیے زور نہیں دے گا۔
اس بیان کے ساتھ ہی انٹونی بلیکن نے یہ بھی کہا ہے اتحادی ممالک جہاں ممکن ہو چین کے ساتھ کام کرسکتے ہیں تاہم بائیڈن حکومت چین کو عسکری اور فوجی اعتبار سے مغرب کے لیے خطرہ تصور کرتی ہے۔

انہوں ںے کہا کہ چین دوسری عالمی جنگ کے بعد تجارت کا بین الاقوامی توازن بگاڑ رہا ہے۔ وہ اس بین الاقوامی نظام کو کمزور کرنے کے درپے ہے جس سے ہمارا اور ہمارے اتحادیوں کا مفاد وابستہ ہے۔

امریکی وزیر خارجہ نے کہا کے اگر ہم عالمی توازن کے اپنے مثبت وژن کو حقیقت بنانے میں کام یاب رہے تو مقابلے کے میدان میں چین کو پیچھے چھوڑ سکتے ہیں۔

دوسری جانب چین کی جانب سے اس تاثر کی تردید کی جاتی رہی ہے۔ چین کا کہناہے کہ وہ ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن(ڈبلیو ٹی او) اور عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) جیسے عالمی اداروں کے طے شدہ ضوابط کا احترام کرتا ہے۔

واضح رہے کہ صدر ٹرمپ کے دور سے چین اور امریکا کے مابین تجارتی مسابقت سرد جنگ کی شکل اختیار کرگئی ہے۔ اس حوالے سے دونوں ممالک ایک دوسرے کے خلاف سفارتی محاذ پر سخت اقدامات کررہے ہیں اور ایک دوسرے کے سفارت کاروں اور کاروباری شخصیات پر پابندیاں بھی عائد کرچکے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں